استورمیں بھیڑیوں نے 6مویشی ہلاک کر دئیے

استور: وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان خالد خورشید کے حلقے انتخاب اور استور کے بالائی علاقے دیوسائی بیس کیمپ داسخریم چلم میں جنگلی بھیڑیوں نے غریب مقامی لوگوں کے قیمتی جانوروں کو حملہ کر کے مار دیا۔ مقامی افراد کے مطابق جنگلی بھیڑیوں نے داسخریم داس پائین میں جانوروں پر حملہ کیا اور لاکھوں مالیت کے 9 جانور کو مار دیا جبکہ 3 جانوروں کو ذخمی کر دیا ہے ..

اہل علاقہ نے میڈیا کو تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ ہر سال اسطرح غریب لوگوں کے سینکڑوں جانوروں کو بھڑیے اور برفانی ریچھ کھا جاتے ہیں لیکن محکمہ وائلڈ لائف اور ضلعی انتظامیہ سمیت حکومت گلگت بلتستان نے کسی قسم کا تعاون نہیں کیا اور نہ ہی کسی قسم کا معاوضہ دیا گیا. جبکہ اس سال داسخریم میں شدید برفباری کی وجہ سے پہلے ہی غریب لوگوں کے سینکڑوں جانور مر چکے ہیں اور سینکڑوں بیمار ہوئے پھر بھی کوئی توجہ نہیں دی گئی. مقامی لوگوں نے کہا کہ حکومت ایک طرف نیشنل پارک بنانے کے دعوے اور عوام کو سہولیات فراہم کرنے کی باتیں کرتی ہے تو دوسری طرف قمیتی جانوروں کے ضیاع پر کوئی معاوضہ نہیں دیتے اگر ایسا سلسلہ جاری رہا تو مجبوراً لوگ بندوں اٹھائیں گے اور بھیڑیے، ریچھ سمیت جنگلی حیات کو گولیاں مار دیں گے. داسخریم چلم کی عوام نے وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان خالد خورشید ،ضلعی انتظامیہ استور اور محکمہ وائلڈ لائف سے مطالبہ کیا کہ فوری طور پر لوگوں کے نقصانات کا ازالہ کریں ورنہ احتجاج کرنے پر مجبور ہو جائیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں